Warning: Undefined array key "geoplugin_countryName" in /customers/d/7/4/urdufalak.net/httpd.www/wp-content/plugins/stylo-core/stylo-core.php on line 96

مصرع طرح: اے شہِ ملکِ جنوں غم کے بیابان میں آ (شاعر: ولی دکنی)

افتخار راغبؔ
دوحہ، قطر

غزل برائے آن لائن عالمی طرحی مشاعرہ بیادِ ولی دکنی
زیر اہتمام: بزمِ اردو قطر (قطر کی قدیم ترین اردو ادبی تنظیم قائم شدہ 1959)
مصرع طرح: اے شہِ ملکِ جنوں غم کے بیابان میں آ (شاعر: ولی دکنی)

تیری ہر آن انوکھی ہے کسی آن میں آ
عکسِ صد رنگ لیے دیدۂ حیران میں آ

اب کسی کام میں کیا خاک لگے دھیان مرا
آ کسی وقت بھی، ہر آن تو مت دھیان میں آ

کر دے مسمار نہ سب کچھ ترا دیوانہ پن
خول سے ضد کے نکل، ہوش کے ایوان میں آ

اِس سے پہلے کہ چمتکار مٹا دے سب کچھ
ایسا کچھ پھینک کہ بھکتوں کی بھی پہچان میں آ

پھر سے اے فصلِ اماں تیری ضرورت ہے بہت
خواہشِ دل سے نکل، حلقۂ امکان میں آ

نور سے حسن کے تیرے، ہے تخیل پُرنور
پیکرِ شعر میں ڈھل، آ مرے دیوان میں آ

کسل مندی کا تقاضا ہے شبستان میں رہ
سبزگی دوب کی کہتی ہے کبھی لان میں آ

چاہتا ہوں کہ مرا دل ہو مرمّت پہلے
کیسے دعوت دوں تجھے خانۂ ویران میں آ

ناخدا کون ہے راغبؔ اُسے معلوم نہ تھا
میری کشتی سے وہ کہتا تھا کہ طوفان میں آ

اپنا تبصرہ بھیجیں