نازنینوں کے دل چُراتا ہوں شاعر مسعود منور

یاروں میں بیٹھ جاتا ہوں

گونگوں ، بہروں کو دُکھ سناتا ہوں

۔۔۔۔۔۔

کوئی سُنتا نہیں ہے سُن کر بھی

میں یونہی اپنا سر کھپاتا ہوں

۔۔۔۔۔

میری ماچس ہے یہ سُخن سازی

میں فقط تیلیاں جلاتا ہوں

۔۔۔۔۔

مونہہ بنا کر ، نکال کر آنکھیں

آئینے ، میں تجھے ہنساتا ہوں

مزاحیہ غزل

چوری اور یاری میرا پیشہ ہے

نازنینوں کے دل چُراتا ہوں

۔۔۔۔۔۔

میں خُدا ساز آدمی تو نہیں

روز کیوں تیرا بُت بناتا ہوں

۔۔۔۔

چھپ گئی ہے چُڑیل میک اپ میں

میں اُسے جا کے ڈھونڈ لاتا ہوں

۔۔۔۔۔۔

یہ مرا قومی وصف ہے یارو

لوڈ شیڈنگ میں دن بِتاتا ہوں

۔۔۔۔

قوم کے آگے بُلھے شاہ کی طرح

میں تُمہیں ناچ کر دکھاتا ہوں

۔۔۔۔

میں علی کا ملنگ ہوں مسعود

نعرہ ء حیدری لگاتا ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں