خشکیوں کے دو جزیروں پرسمندردیکھنا۔۔

خشکیوں کے دو جزیروں پرسمندردیکھنا۔۔۔۔۔

میری آنکھوں میں میری ہجرت کے منظر دیکھنا۔۔۔۔۔۔۔

اب بتوں کیسر چڑھا قرضہ اترنا چاہئے۔۔۔۔۔

کوئی پیغمبرکوئی ہادی قلندر دیکھ نا۔۔۔۔۔

باغباں اِس طور ہے شبنم گرانی آجکل۔۔۔۔۔۔۔

بند کلیوں کا کھلے گا نہ مقدر دیکھنا۔۔۔۔۔۔۔

خوش ادا ،خوش شکل،خوش رنگ ونظر و خوش نما۔۔۔۔۔۔

ایسابھی کوئی ہے کیا اس کے برابر دیکھنا۔۔۔۔۔۔

عکس کیسے یہ میری تاریخ میں ہیں آئینہ گر۔۔۔۔

لوگ ہاتھوں میں لئے بیٹھے ہیں پتھر دیکھنا۔۔۔۔۔۔

پھر گواہ جھوٹے بیاں دیں گے تیرے سچ کے خلاف۔۔۔۔۔۔

فیصلہ منصف بھی نہ دے گا بدل کر دیکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔

جل رہے ہیں آسماں پر چاند تاریجِس طرح۔۔۔۔۔۔

تو زمیں پراِس طرف اِس پار جل کر دیکھ نا۔۔۔۔۔۔۔

دیکھتی ہے کِن نگاہوں سے تجھے خلقِ خدا۔۔۔۔۔۔

تو کبھی اقبال گھر سے بھی نکل کر دیکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں