اند ر کی باتیں

اند ر  کی  باتیں

سائیں  رحمت  علی  ناتھن شاہی  سویڈن


بڑے  بے  آبرو  ہو  کر  تیرے  کوچے  سے  ہم  نکلے

لو  جی  سپریم  کورٹ  نے  فیصلہ  دے  دیا.  بے چارے  قادری   صاحب  بوریا  بستر  سمیٹ  کر   واپس  لوٹ  گئے.  شہرت  انسان  سے  کیا  چھ  کروا  دیتی  ہے.  قادری  صاحب  کو  نہ  جانے  کیا  سوجھی  کہ  کنیڈا  کی  پر  آسائش  زندگی  کو  خیر آباد  کھ   کر   پاکستان  میں  وارد  ہوئے .  آتے  ہی  لاھور  میں  جلسہ  کر دیا .  جلسے  کے  مجمعے  کو  دیکھ  کر  قادری  صاحب  کے  حوصلے   مزید  بلند  ہو گئے.  رہی  سہی  کثر  متحدہ  قومی  موومنٹ  نے  پوری  کر  دی.  قادری  صاحب  کے  ذہن  کے  کسی  گوشہ  میں  یہ  بات  ضرور تھی  کہ  ایم  قیو  ایم   اور  عمران  خان  وہ  دو  پر   ثابت  ہوں  گے  جن  پہ  سوار  ہو کر  قبلہ  صاحب  سیاسی  معراج  پہ   پنہچ  جایئں  گے.  ڈاکٹر  صاحب  اس  حقیقت  کو  بھول  گئے  کہ  پاکستان  کے  سیاسی  افق  میں  پرواز  کرتے  وقت  بڑوں  بڑوں  کے  پر  جل  جاتے  ہیں.      ڈاکٹر  صاحب  منہاج  القران  میں   قوالی  کے  دوران  طبلہ  کی  تھاپ   پہ  اکثر   مستی  میں  رقص  بھی  فرماتے  تھے  لہٰذا   الطاف  بھائی  نے  دور  سے  سہانہ  ڈھول  بجا  کر   ڈاکٹر  صاحب  کو  مست  کر دیا .  اور  عمران   بھائی  نے  فاسٹ  بولر  والا  ایکشن  بنا  کر   دور  سے  بال  ہوا  میں  لہرایا.  ڈاکٹر  صاحب  نے  سمجھا  کہ  اب   سب  کے  سب  آوٹ  ہو  جائیں  گے.  ڈاکٹر  صاحب  نے  اس  عالم    مدھوشی  میں    ایسے  ایسے  مطالبے   کرنے  شروع  کر  دیئے  جو  کہ  ایک  عام   پاکستانی  کی  نظر  میں  بھی  غیر  آئینی  تھے.  یہ   بھی   فرما  دیا   کہ   اب   لانگ  مارچ   ہوگا  اور  پارلیمنٹ  کے  سامنے  دھرنا  ہوگا.  آخر  وہ  دن  آگیا  ڈاکٹر  صاحب   جاہ  جلال  کے  ساتھ  بلٹ  پروف  کنٹینر  میں  بیٹھ  کر  ،  کیل  کانٹے  سے  لیس  ہو  کر   بمع  لشکر  اسلام آباد  آ  وارد  ہوئے.  جنگ  پانی  پت  کے  نکارے  بج  گئے.  فوجیں  مقابلہ  کے  لئے  میدان  کارزار  میں  آمنے  سامنے  کھڑی   ہو  گئیں .  کس  کی  پان  پت  اتری   اور  کس  نے  اتاری  یہ  کہانی  پھر  سہی.  قبلہ  اس  قدر  مست  ہو  چکے   تھے  کہ  چالیس  ہزار  بھی  چالیس  لاکھ  لگتے  تھے .   امید  تھی  کہ  عمران  اور  الطاف  بھائی  کمک  کے  ساتھ  آجائیں  مگر  عین  آخری  وقت  میں  ان  صاحبان  نے  اس  کار  شر  میں  شرکت  نہ  کرنے  کا  فیصلہ  سنا  کر  قبلہ  صاحب  کی  عقل  کو  ٹھکانے   لگا  دیا  مگر  اب  تیر  کمان  سے  نکل  چکا  تھا.  ڈاکٹر  صاحب  نے  اس  نئی  صورت  حال  کو   بڑی  مہارت  سے  سنبھالا.  مجمع   سے  اللہ  اور  قرآن  پاک  پہ  حلف  لیا  کہ  وہ  ڈاکٹر  صاحب  کو   چھوڑ  کر  نہیں  جائیں  گے.  لوگوں  کے  دلوں  کو مزید   نرم  کرنے   کے  لئے  حضرت  امام  حسین  (ع  )   کا  شب  عاشور  کا  واقع  بیان  فرمایا.  مجمع  کو  قابو  میں  دیکھ  کر   ساری  حکومت  کو  بھی  ایک  ہی  سانس  میں  چھٹی  کروا  دی.  دشمن  کو  کبھی  کمزور  نہیں  سمجھنا  چاہئے  اور  یہی  آپ  کی  سب  سے  بڑی  غلطی  تھی.دشمن  فوج  کا  سپہ  سالار  خاموشی  سے  کراچی  چلا  گیا  اور  اپنا  جانشین  ایسے   شخص  کو  بنا  کے  گیا  جو   پان  پت  اتارنے  کا  ماہر  مانا  جاتا  ہے.  چودھری  صاحب  کی  حکمت  عملی  تھی  کہ  دشمن  کو  تھک  جانے  دیں  پھر  یہ  خود  ہی   گھٹنے  ٹیک  دیں  گے  اور  بلکل  یہی  ہوا.  پانچ  روز  کی  مسلسل  قید  کے  بعد  ڈاکٹر  صاحب  نے  خود  ہی  وا  ویلا  شروع  کر  دیا .  چودھری  صاحب  نے    مذاکرات  کی  میز  پر  قبلہ  صاحب  کو  ایسا  دھوبی   پٹکا  مارا  کہ  چاروں  شانے  چت   .  چودھری  صاحب  جاتے  جاتے  لاھور  میں  ملاقات  کا  وعدہ  بھی  کر  گئے.  قادری  صاحب  کے  دھرنے  کے   نتیجہ  کو   اگر  تین  لفظوں  میں  لکھا  جائے  تو  کچھ  ایسا  ہوگا  کہ  قادری  صاحب  کا  بچا   کچھ  نہیں  اور  حکومت  کا  بگڑا  کچھ  نہیں.  ٧٢  جنوری  کو  مذاکرات  کا  دوسرا  دور   ہو ا  مگر  حاصل  وصول  کچھ  نہیں  اس  لئے   اب   سپریم  کورٹ  ہی  رہ  گئی  تھی  لہٰذا   ڈاکٹر  صاحب  بمع  لشکر   وہاں  بھی  پہنچ  گئے. سپریم  کورٹ  نے  ڈاکٹر  صاحب  کو   دو  دن   میں  ہی  فارغ  کر  دیا .  ڈاکٹر  صاحب  گئے  تو  بڑے  ضعم  کے  ساتھ  تھے  مگر  یہ  بھول  گئے  تھے   کہ  پاکستان  کی  سپریم  کورٹ  اب  وہ  نہیں  جہاں    جسٹس  منیر  ،  جسٹس  انوار  الحق  اور  مولی  مشتاق   جیسے   بے  ضمیر    جج   ہوتے  تھے .  آج  سپریم  کورٹ  کا  نقشہ  بدل  چکا  ہے.  چیف  جسٹس    نے  دہری   شہریت  کے  حوالے  سے  جو  ریمارکس  دیئے  ہیں  وہ   بہت  سے  سمندر  پار  پاکستانیوں   کے  لئے   دل  آزاری  کا  سبب  بنے  ہیں  مگر   پاکستان  کے  آئین  کے  مطابق  یہ  فیصلہ  درست  ہے. قادری  صاحب  کو  جتنا  اپنی  فتح   کا  یقین  تھا  اتنا  ہی  مجھے  ان  کی  ناکامی   کا   یقین   تھا.  بحرحال   اب  کیا  ہو  سکتا  ہے.  جس  مایوسی  اور  بے  چارگی  سے  قادری  صاحب  کورٹ   سے  نکلے  وہ  حال  دیکھ   کر   غالب  کا  فقرہ  یا د  آگیا.  بڑے  بے  آبرو  ہو  کر  تیرے  کوچے  سے  ہم  نکلے.ڈاکٹر  صاحب  کی  خدمت  میں  مفت  مشورہ  ہے .  خاموشی  سے  کنیڈا   واپس  چلے  جائیں  اور  آرام   سے  زندگی  گذاریں.  یہ  نہ  ہو   کہ   سپریم  کورٹ  کے  بعد   پاکستانی  عوام  بھی  اپنی  عدالت  سے  نکال  دیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں