Home / حالات حاضرہ / خبریں / وہ ملک جہاں اسقاط حمل یا مردہ بچے کی پیدائش پر والدین کو چھٹیاں دینے کا قانون منظور کرلیاگیا

وہ ملک جہاں اسقاط حمل یا مردہ بچے کی پیدائش پر والدین کو چھٹیاں دینے کا قانون منظور کرلیاگیا

وہ ملک جہاں اسقاط حمل یا مردہ بچے کی پیدائش پر والدین کو چھٹیاں دینے کا قانون منظور کرلیاگیا

نیوزی لینڈ میں اسقاطِ حمل یا مردہ بچے کی پیدائش پر والدین کو ادائیگی کے ساتھ چھٹیاں دینے کا قانون منظور کرلیا گیا۔

نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ نے اسقاطِ حمل یا مردہ بچے کی پیدائش پر ’صدمے کی چھٹیوں‘ کا ایک قانون منظور کیا ہے جس کے تحت اس صورتحال سے دوچار والدین کو تین روز کی چھٹیاں دی جائیں گی جس کے عوض ان کی تنخواہ نہیں کاٹی جائے گی۔

نیوزی لینڈ کی رکن پارلیمنٹ جینی اینڈرسن نے پارلیمنٹ میں اس حوالے سے بل پیش کیا جسے متفقہ طور پر منظور کیا گیا۔

Image

بل کا اطلاق بچوں کو گود لینے اور سروگریسی کے عمل سے بچے کی پیدائش والے والدین پر بھی ہوگا۔بل پیش کرنے والی رکن پارلیمنٹ جینی اینڈرسن کا کہنا تھا کہ نیوزی لینڈ میں ہر چار میں سے ایک خاتون اسقاطِ حمل کا شکار ہوتی ہے، انہیں امید ہے کہ یہ نیا اقدام انہیں موقع فراہم کرے گا کہ وہ بیماری کی چھٹیاں لیے بغیر اپنے نقصان یا صدمے کو برداشت کرسکیں۔انہوں نے کہا کہ اگرچہ اسقاطِ حمل کوئی بیماری نہیں بلکہ ایک نقصان ہے اور نقصان وقت لیتا ہے۔

خیال رہے کہ ایک سال قبل نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ نے ایک اصلاحاتی بل منظور کیا تھا جس میں خواتین کو 20 ہفتوں کے حمل کو ضائع کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔

 

Check Also

انٹر کلچرل وومن گروپ اوسلو میں موسم خزاں کی الوداعی پارٹی،فن پاروں کی نمائش اور ادبی محفل

انٹر کلچرل وومن گروپ اوسلو میں تیس ستمبر بروز جمعرات ڈیزائننگ اور لینگوج گروپ نے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *



Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.
%d bloggers like this: