یاد رفتگان

یاد رفتگان

بدر المشائخ حضرت پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ محمد یعقوب اویسی

ایڈووکیٹ۔۔۔۔ چیف ایگزیکٹو ادار ہ تاجدار یمن پاکستان اولیاء اللہ نے قرب الہٰی کی منزلوں پر فائز ہو کر قوم کو قرآن و سنت کے مطابق نئی فکر عطا فرمائی ۔چونکہ جس طرح اللہ تعالیٰ نے انبیاء کرام علیہم السلام کی سیرت و کردار پر ”عصمت” کا پہرا لگا رکھا تھا اسی طرح ولایت کے منصب پر فائز ہونے والے اشخاص کے عمل و کردار پر اللہ تعالیٰ نے اپنی حفاظت کا پہرا بیٹھا دیا۔ نوے لاکھ کافروں کو کلمۂ توحید پڑھانے والے خواجہ معین الدین چشتی اجمیری رحمة اللہ علیہ کو ولایت محمدی ۖ ہی تو حاصل تھی ۔خواجہ محکم الدین سیرانی بادشاہ رحمة اللہ علیہ جہاں سے گزرتے انسان تو انسان درخت ،چرند و پرند ہر چیز کلمہ کا ورد شروع کر دیتی یہ فیضان محمد ی ۖ ہی تو تھا ۔معزز قارئین:یاد رہے ولایت کے لئے اعمالِ صالحہ کے ساتھ ساتھ عشقِ محمدی ۖ شرطِ اول کی حیثیت رکھتا ہے ۔اس لئے کہ عبادات دل کو نرم کرتی ہیں اعمال  صالحہ بندہ کی ظاہری و باطنی پاکیزگی کا ذریعہ ہیں مگر چہرہ پر نورانیت فقط ”عشق محمد ۖ” سے ہی آتی ہے ۔پھر احادیث میں ولایت کی بڑی نشانی بھی یہ ذکر فرما ئی گئی کہ ولی وہ ہے جس کو دیکھ کر خدا یاد آجائے ۔بے ساختہ منہ سے سبحان اللہ سبحان اللہ نکلے ۔ ایسے ہی ایک ولی کامل ،مرشد اکمل ،عالم ربانی ،راہبر حقانی ،حاملِ کردارِ نورانی ،صاحب ذوقِ قرآنی ،آئینہ یزدانی، برھان الواصلین ، حجة الکاملین ، ماہتاب ولایت، بدر المشائخ حضرت قبلہ الحاج پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ وارث دربار عالیہ اویسیہ علی پور چٹھہ شریف کی ذات ستودۂ صفات ہے جن کی زیارت میں نے 1990ء میں کی اور پھر چہرہ دیکھ کر دل نے گواہی دی یہ ولایت محمدی ۖ کے حامل ہیں جن کی صحبت دنیا و آخرت میں نجات کا ذریعہ بنے گی ۔ پھر کیا تھا رات محفل میلاد النبی ۖ میں زیارت بدرا لمشائخ کے بعد نیند نہ آئی ۔ساری رات ولی کامل کے چہرۂ انور کے نقشے پکاتا رہا ،تصور کی دنیا میں کھو گیا اور صبح ہوتے ہی اس ماہتاب سے روشنی و نور لینے کے لئے دامنِ طلب بذریعہ بیعت روحانی پھیلا دیا ۔دستِ بدرالمشائخ حضرت پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ پر بیعت کرنے سے سکونِ قلبی میسر آیا ،مرشدِ کامل نے فرمایا ہر روز نماز فجر کے بعد 11مرتبہ قل ھو اللہ ۔11مرتبہ کلمہ طیبہ اور 11مرتبہ درود شریف اپنا معمول بنا لو۔ بعدنماز مغرب دو رکعت نفل برائے ایصال ثواب امام العاشقین حضرت سیدنا خواجہ اویس قرنی رضی اللہ عنہ بھی ادا کیا کرو۔ دین کی خدمت کروگے تو تائیدِ ایزدی اور فیضان مصطفوی ۖ نصیب ہو گا۔ میرے مرشد حقانی کے الفاظ سادے مگر دلوں میں اترتے جاتے تھے ۔ معزز قارئین! حضرت بدرا لمشائخ پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ یادگار اسلاف بھی تھے اور زینت محفل اسلاف بھی ،آپ عرصہ دراز سے محلہ رسول نگر نارووال میں بسلسلہ محفل میلاد مصطفےٰ ۖ تشریف لاتے ۔آپ کی وجہ سے محلہ میں ایک خوبصورت مسجد کی تعمیر کی گئی ۔خود بھی با جماعت نماز کے پابند تھے اور اپنے حلقہ ارادت کو بھی نماز کی سختی سے تلقین فرماتے ۔ دراز قد ، خوبصورت چہرہ ،نورانی پیشانی ،گیسو دراز ،داڑھی گھنی اور لمبی جس کو مہندی سے رنگ دار کیا گیا تھا، سفید عمامہ مگر سادہ ،لباس سفید مگر سادہ و صاف ستھرا ، دیسی چمڑے کی جوتی اور چال ڈھال میں عاجزی و مروت ،ایسے شخص کو دیکھ کر بھلا کون متاثر ہوئے بغیر رہ سکتا تھا ۔جب بدرالمشائخ وعظ و نصیحت فرماتے تو ایسے محسوس ہوتا کہ وقت کا عالم ،محدث ،فقیہ اور محقق گفتگو کر رہا ہے اور جب تصوف کے رموز و اوقاف بیان فرماتے تو ایسے لگتا کہ قرون اولیٰ کے کسی صوفی کے سامنے بیٹھے ہیں ۔ بدرالمشائخ حضرت پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ کسی کے ہاں بغیر محفل میلاد النبی ۖ تشریف نہ لے جاتے ۔ ساری زندگی علی پور چٹھہ میں گزاری ،مسجد تعمیر کروائی ،کئی حج فرمائے اور کئی عمرے ،خانقاہ کو تجارت و کاروبار نہ بنایا بلکہ انسانیت کے دکھوں کا مداوا قرار دیا ۔کبھی کوئی آیا ہوا سوالی خالی نہ گیا۔ تبحر علمی کا یہ عالم تھا کہ نارووال میں ایک مرتبہ استنجا کے لئے کتنا پانی استعمال کیا جائے پر بحث چل نکلی ،کسی عالم دین نے کہا کہ پانی اتنا استعمال کیا جائے جو اسراف میں نہ آئے اور کسی نے کہا تھوڑے پانی سے استنجا ممکن نہیں ۔حضور بدرالمشائخ رحمة اللہ علیہ کی نارووال سالانہ محفل میں تشریف آوری ہوئی تو علماء کرام آپ کی خدمت میں بھی حاضر ہوئے اور مسئلہ دریافت کیا  ۔ میرے مرشد حقانی حضرت بدرالمشائخ پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ نے فرمایا جتنے پانی کے استعمال سے دل کو استنجا کرنے میں اطمینان ہو جائے اتنا پانی استعمال کرنا جائز ہے ۔علماء دھنگ رہ گئے ۔کئی دنوں کی بحث ایک جملے نے ختم کر دی ۔یہ عطائے ربی و فیضان محمد ی ۖ تھا جو ولیٔ کامل کی زبان سے الفاظ بن کر نکلا ۔ بدرالمشائخ حضرت پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ عبادت و ریاضت ،زہد و تقویٰ اور عمل و پیرویٔ سنت میں ضرب المثل کی حیثیت رکھتے تھے ۔ نبی کریم ۖ کے ساتھ والہانہ عشق تھا ۔توصیف مصطفےٰ ۖ سماعت کرتے ہوئے بے ساختہ آنکھوں سے آنسوئوں کی جھڑی لگ جارتی ۔سیدنا خواجہ اویس قرنی رضی اللہ عنہ کے ذکر کی سالانہ محفل پاک بڑی دھوم دھام سے سجاتے اور اپنے سلسلۂ روحانیہ” سلسلہ عالیہ اویسیہ ” پر فخر فرمایا کرتے تھے ۔اپنے مرشد کامل عارف با اللہ حضرت سائیں فقیر اللہ اویسی رحمة اللہ علیہ کی خدمت و آستانہ پر ساری زندگی بسر فرمائی ۔اُن کے مشن کو جاری رکھا اور انہی کے قدموں میں جان دے کر مرشد کے پہلو میں آج بھی آرام فرما ہیں ۔ تحریک ختم نبوت سے لے کر تحریک نظام مصطفےٰ ۖ تک حضرت بدر المشائخ پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ ہر اول دستے میں شامل رہے ۔تعمیر انسانیت میں اس قدر ماہر تھے کہ بڑے ہیرے تراش کر قوم کے راہبر بنائے ۔ معزز قارئین ! حضور بدرالمشائخ پیر سائیں محمداسلم اویسی رحمة اللہ علیہ نے شاہکار قدرت حضرت انسان کو قربتوںکے دیس میں لے جانے کے لئے ہر جمعرات بعد نماز عشاء محفل ذکر الہٰی کا اہتمام کر رکھا تھا جو آج بھی جاری ہے  ، محفل ذکر میں سب سے پہلے کلمہ طیبہ لا الہ الا اللہ کا ورد ہوتا ۔پھر الا اللہ ،پھر اللہ ھو اللہ ، پھر سبحان اللہ ،پھر الحمد للہ ،پھر اللہ اکبر، پھر اللہ الصمد اور آخری ورد اللہ ھو کا کروایا جاتا ۔لیکن محفل ذکر میں حدیث نبوی ۖ کہ” تم اللہ کا ذکر اس طرح کرو کہ لوگ تمہیں دیوانہ کہیں ” کا خوب خوب منظر نظر آتا ،لوگوں کے دلوں کو ذکر اللہ سے صیقل کر کے ان میں عشقِ رسول ۖ کے چراغ روشن کئے جاتے ،تو پھر جو ایک بار ذکر میں آتا ہر جمعرات کو خود بخود اُس کی خواہش ہوتی کہ محفل ذکر میں ضرور شامل ہو جائوں ۔جب کبھی حضور بدرالمشائخ رحمة اللہ علیہ سے معرفت الہٰی کے بارے سوال کیا جاتا تو آپ فرماتے کہ اللہ تعالیٰ کی معرفت کے لئے کوئی خاص رستہ نہیں ہے ۔کسی کو وہ بھوک سے ملتا ہے اور کسی کو پیٹ بھر کر کھانے سے ،کسی پر اللہ تعالیٰ اپنی معرفت کے دروازے مجاہدات سے کھولتا ہے اور کسی بندۂ مومن کو بغیر مشقت کے مل جاتا ہے ۔ آپ اکثر فرمایا کرتے کہ جس کو اللہ تعالیٰ جتنا مقام عطا فرمائے دوسروں پر اُسے ماننا ضروری ہے اگر نہ مانیں گے تو یہ بھی عطائے الہٰی کا انکار ہو گا ۔ حضور بدرالمشائخ رحمة اللہ علیہ سیاست سے کوسوں دور تھے مگر سیاست پر مذہبی افراد کی گرفت و اثر کے زبر دست قائل تھے ۔آپ امیروں ،وزیروں کو ملنے کے کبھی خواہش مند نہ ہوئے اور نہ شہرت کے دلدادہ تھے بلکہ فقر و درویشی کو ہی اپنا اوڑھنا بچھونا بنائے رکھا ۔خدمتِ خلق کو تصوف کا اہم جزو قرار دیتے اسی لئے دربار عالیہ اویسیہ علی پور چٹھہ پر آنے والے ہر زائر کیلئے وسیع لنگر کا اہتمام فرمائے رکھتے ۔فضول گوئی تو آپ کی حیاتی میں تھی ہی نہیں ۔بلکہ جب بھی کوئی جاتا دین کی باتیں بتاتے ۔ادب و سلوک کی منزلوں کو طے کرواتے اور اللہ و رسول ۖ سے ملواتے تھے ۔تبلیغ دین ،فروغ تصوف ،احیائے کلمہ حق ،نفاذِ نظام مصطفےٰ ۖکے لیے اپنی زندگی کا پل پل بتا تے ہوئے آخر یہ ولایت محمدی ۖ کا حا مل آفتا ب وماہتا ب حکم ربی کے مطا بق 28نومبر 2000ء کو اس جہان فانی سے غروب ہو کر جہان بقا میں طلو ع ہوا، عقید ت مندوں پر قیامت ٹوٹ پٹری ۔ روحا نی وجسما نی غذا مہیا کرنے والے غنی بے مثال کے چہرہ پرُجما ل کو دیکھنے کے لیے نظریں بے تاب ہو گئیں اور شاید قیامت تک رہیں ۔

نماز جنازہ میں ملک و بیرون ملک سے ہزاروں افراد نے شرکت کی ۔ ولی کامل کا جنازہ تھا جو پڑھنے والوں کیلئے بھی مغفرت کا سبب تھا ۔پہلوئے مرشد میں مشائخ کا چاند آسودۂ خا ک ہوا ۔حضور بدرا لمشائخ پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ نے اپنی ظاہری حیات مبارکہ میں بالخصوص مریدین اور بالعموم حامیانِ اسلام کو منظم و متحرک کرنے کے لئے اپنے ہونہار و باکمال صاحبزادے حضرت علامہ پیر غلام رسول اویسی صاحب کی زیر قیادت تحریک اویسیہ پاکستان کا قیام فرمایا ۔جس کی ضلعی تنظیمات الحمد للہ پورے ملک کے اضلاع میں موجود ہیں اور تبلیغ دین کا فریضہ سر انجام دے رہی ہیں ۔مدارس میں اصلاحات اور طلباء میں جذبۂ خدمتِ دین اور فروغ عشق رسول ۖ کے لئے اویسیہ تعلیمی بورڈ کو قائم فرمایا جس کے ذریعے ملک کے سینکڑوں مدارس دینیہ کا تعلیمی و تدریسی مضبوط و مربوط نیٹ ورک قائم ہے۔ آپ ہی کے فیضان سے تعلیمات سیدنا خواجہ اویس قرنی رضی اللہ عنہ اور افکار اولیاء کے فروغ کیلئے ماہانہ بنیادوں پر ایک دیدہ زیب و تحقیقی مجلہ” تاجدار یمن”نارووال سے شائع ہوتا ہے جو ملک و بیرون ملک مذہبی حلقوں میں مقبول و محبوب ہے ۔ حضرت بدر المشائخ پیر سائیں محمد اسلم اویسی رحمة اللہ علیہ کے یوم وصال 28نومبر پر ہر سال مرکز اویسیاں نارووال میں آپ کے محبوب خلیفہ حضرت علامہ پیر محمد تبسم بشیر اویسی سجادہ نشین مرکز اویسیاں نارووال،صوبائی امیر عالمی تنظیم اہلسنت پنجاب وقائد تحریک اویسیہ پاکستان کی زیر نگرانی ہر سال عرس بدرالمشائخ کے عنوان سے جشن اویسیاں منعقد کیا جاتا ہے ۔جو اس سال بھی 28نومبر 2012ء بروز بدھ منعقد ہو رہا ہے ۔ جس کی صدارت سجادہ نشین دربار اویسیہ علی پور چٹھہ شریف ،عالمی مبلغ اسلام ،مرکزی امیر تحریک اویسیہ پاکستان حضر ت پیر غلام رسول اویسی اور حضرت میاں غلام اویس اویسی فرماتے ہیں ۔جبکہ پیر سید منورحسین شاہ جماعتی سجادہ نشین حضرت امیر ملت علی پور سیداں شریف، صاحبزادہ پیرمحمد ظہورواصف بڈیانوی سجادہ نشین واصفی آستانہ ،چوہدری اسد محمود نقشبندی آف گھمکول شریف ،پیر سید اظہر الحسن شاہ گیلانی سجادہ نشین آستانہ عالیہ کلی شریف و دیگر مشائخ مہمانان خصوصی ہونگے۔  ملک بھر سے جید علمائے کرام ،دانشور ،ادیب و خطیب جشن اویسیاں میں شرکت کر کے حضور بدر المشائخ کو خراجِ عقیدت پیش کرتے ہیں ۔اس سال عرس مبارک میں پاسبان فکر رضا علامہ سید محمد عرفان شاہ مشہدی اور خطیب پاکستان علامہ سید فدا حسین شاہ حافظ آبادی خصوصی خطاب فرمائیں گے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں