‏ہماری صورتیں دیواروں سے مت مٹانا

قلمکار: نینا ملک

رُوحِ مَن!

‏ہماری صورتیں دیواروں سے مت مٹانا

‏ہم سوئے ہوئے خواب ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔

‏جو تمہیں قدیم پتھروں کے نیچے پڑے ملیں گے

‏موت ہمیں مل کر جدا ہو چکی ہے۔۔۔۔۔

‏ہم غموں،تکلیفوں اور افسوس کی
‏تمام حدوں کو چھو چکے ہیں۔۔

‏اس سے آگے محض اب خوشی کا ٹھکانہ ہے
‏ہم کسی بھی لمحے جاگ سکتے ہیں
‏دیواروں پر پڑی گرد کے پیچھے بنی
‏تصویروں سے باہر
‏آسکتے ہیں۔۔۔

‏غاروں،جنگلوں،بیابانوں
‏اور گہرے سمندروں کی تہوں میں
‏بسی بستیوں میں

‏شاعروں کے لکھے قدیم نغموں میں

‏موسیقی کی کلا میں

‏طوائف کے رقص کرتے قدموں میں
‏پاؤں میں بندھے گھنگروں سے
‏نکلتی ہوئی

‏چھم۔۔۔۔چھم۔۔۔۔چھنن۔۔۔۔چھن۔۔۔۔چھم
‏کی آواز میں

‏کوٹھے کی سب سے تاریک کوٹھری میں پڑی
‏طوائف کی سیاہ چادر کی

‏پھٹی ہوئی درزوں سے نکلے ہوئے
‏دھاگوں سے بندھے ہوئے طبلوں سے نکلتی ہوئی

‏تاتھئی۔۔۔۔۔تاتاتھئی۔۔۔۔تاتاتھئی۔۔۔۔تھا۔۔
‏کی دھنوں میں ہم موجود ہیں۔۔۔۔۔۔

‏سو ہمیں دیواروں سے مت مٹانا۔۔۔۔

‏ہم ہی ہیں جو شاید

‏تمہارے آنے والی نسلوں کےلئے

‏وارث کی لکھی ہوئی ہیر کی داستاں کےجیسے
‏کسی کتاب میں لکھے ملیں گے۔۔۔

‏ہم صدی کے آخری وہ لوگ ہیں
‏جو بلھے کو رقص سکھاتی طوائف کی
‏عزت کرنا جانتے ہیں

‏سو ہماری صورتیں دیواروں سے مت مٹانا۔۔۔

‏ہم تمہارے بچوں کی لوک کہانیاں ہیں۔۔۔۔

‏سو ہمیں دیواروں سے مت مٹانا۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں