ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو

See full size image

اے خدا کے بندوں میں منتخب خدا والوتختِ اِنما والو    تاجِ  ہل اتی  والوشانِ مصطفے   والو  وضعِ مرتضی والوکیا وفا پہ جانیں  دیں تم نے اے وفا والو          ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو  ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو

چھوٹے چھوٹے بچوں نے جنگ کی اجازت لیبڑھ گئے جواں بن کر کم سِنی سے رخصت لیقوم کی حمایت میں عزتِ شہادت لی زندگی کو کیا کہئے موت سے بھی خدمت لی                        ہائکربل والو ہائے کربلا والو
کِس بلا کے جنگل میں آلِ مصطفے ٹھہریبے دیاروں کا مدفن  ارضِ کربلا ٹھہریآئی شامِ عاشورہ صبح کو وغا ٹھہریکیا خبر  مدینہ کو شامیوں سے کیا ٹھہری                        ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو
حق پہ مرنے والوں نے جان دی سلیقے سےشوق سے تمنا سے عزم سے ارادے سےزندگی نہ کی پیاری فاطمہ کے پیارے سے ماں کی گود سے آیا کوئی کوئی جھولے سے                        ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو
کوئی تم میں اکبر تھا کوئی تم میں اصغر تھاکوئی ثانئِ  جعفر کوئی مثلِ حیدر تھاکوئی قدر و قیمت میں دو جہاں سے بہتر تھازیرِ تیغ کر بل میں فاطمہ  کا گھر بھر تھا                        ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو
اس طرح کے عالم میں پھر نہ دل جگر دیکھےدر پہ آکے ماں نے جنگ کے ہنر دیکھےاپنے چاند کے ٹکڑے خون میں تر  بہ تر دیکھےریگِ گرم پر لاشے، برچھیوں پہ سر دیکھے                        ہائے کربلا والو ہائے کربلا والو

شکریہ۔ مخلص۔ سید محسن نقوی

اپنا تبصرہ بھیجیں