چڑیا کی نظم

آج دانہ نہ ڈال پایا میں

آج مجھ سے خفا گیی چڑیا ۔۔۔۔۔۔۔

اس نے پوچھا سبب اداسی کا ۔۔۔۔۔
میں نے ہنس کر کہا “گئی چڑیا”۔۔۔۔

اس سے پہلے کے ڈوب جاتا میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھکو تنکا تھما گیی چڑیا ۔۔۔۔

بھوکی پیاسی شجر پہ بیٹھی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری کھڑکی بھلا گیی چڑیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تنکا تنکا اٹھا کے لانے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتنے موسم گنوا گیی چڑیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کی قسمت قفس میں مرنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آگیی تھی قضا۔۔۔۔۔ گیی چڑیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پیڑ گرنے کی دیر تھی عاطف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک قیامت اٹھا گیی چڑیا ۔۔۔۔

(عاطف جاوید عاطف)

اپنا تبصرہ بھیجیں