چلےآے محفل میں بے پردہ اب وہ۔۔۔۔۔

husne sada
کرو زندگی اپنی رب کے حوالے۔۔
دعا یہ کہ وہ پاک باطن اٹھالے۔۔۔۔

نہ تھی واقعی ان میں خوبی مگرکچھ۔۔۔۔
کی نام بس شہرتوں نے اچھالے۔۔۔۔

یہ محفل ہے مسجد نہیں شیخ صاحب۔۔۔۔
کہاں جارہے ہیں عمامہ سنبھالے۔۔۔۔

اندھیروں سے ہی ہیاجالوں کی قیمت۔۔۔۔
بظاہر ہیں ضد یہ اندھیرے اجالے۔۔۔۔۔

لگا ہیسدا عیب جوئی میں سب کی۔۔۔۔
خود اپنے گریبان میں منھ وہ ڈالے۔۔۔۔

تمہاری محل سی نہ تھی کوی نسبت۔۔۔۔۔
غریبوں کے گھر بی خطا پھونک ڈال۔۔۔۔۔

https://encrypted-tbn3.gstatic.com/images?q=tbn:ANd9GcTmMk7mXIX20PXIk5jD39KGfq5NoFTj9hoOS9PbT-xaW0JDblNz
چلےآے محفل میں بیپردہ اب وہ۔۔۔۔۔
زمانے سے کہدو وہ نظریں جھکالے۔۔۔۔

ہوا در سے رخصت وہ سال یہ کہ کر۔۔۔۔۔
چلے ہاتھ خالی مگر تو دعا لے۔۔۔۔۔۔

رضِییہ قوافی ہوے تنگ اب تو۔۔۔۔۔
اگر ہو سکے دوسروں کے چرالے۔۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں