غزل پری زاد

غزل


تحریر فاروق سعود
جب  پری زادوں  سے  یارانا   ہوا
شیخ    دو    عالم   سے   بیگانا    ہوا

نین دیکھے جس نے اسکے مثل جام
بن  پیئے دم  بھر  میں مستانا  ہوا

طعنہ زن ہیں مجھ پہ میرے چارہ گر
واہ    وا   یہ  خوب  سمجھانا    ہوا

ناصحا  بس تیری  باتوں  سے مرا
صبر    کا     لبریز   پیمانا    ہوا

ہوں تو میں مصروف لیکن مہرباں
فون    کر   لینا    اگر   آنا   ہوا

مے  وہی بے کیف پہلی سی  نیا
کس   لیئے  تعمیر   میخانہ    ہوا

کیا انہیں دنیا میں عزت ہو نصیب
جن  کا  پیشہ مانگ کر کھانا  ہوا

جرم  تو  تھا  باوا  آدم  نے کیا
کس  خطا  پر مجھ کو جرمانا ہوا

کوستا ہوں اب میں اپنے آپکو
اس گلی میں کیوں مرا جانا ہوا

یار  تھا  عیار  میں  تھا  با خبر
ایسی باتوں میں ہے وہ مانا ہوا

باوجود اسکے بڑھایا اس سے ربط
خاک  تو  فاروق  فرزانا  ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں