“جوابی خط۔۔۔”

“جوابی خط۔۔۔”

 

جلیل نظامی دوحہ قطر

 

۔۔ لہو کرنا قلم القاب لکھنا۔۔

سرشک چشم سے آداب لکھنا۔۔۔

تمہاری خیریت مطلوب لکھ کر

۔۔کتاب دل کا روشن باب لکھنا۔۔۔

حصار ذات میں محصور رہ کر۔۔۔

سلوک و نیت احباب لکھنا۔۔۔۔

کسی ذرے کو بھی کہنا نہ ذرہ۔۔

کبھی اختر،کبھی مہتاب لکھنا۔۔۔

بجز پیر حرم ،سب خاطیوں کو۔

۔نگار منبر و محراب لکھنا۔۔۔۔

امید صبح روشن ،شام حسرت۔۔

شکستہ حال ،میٹھے خواب لکھنا۔۔۔

۔ غم تنہائی ،یاد عہد رفتہ۔۔۔

اکیلے پن کا سد باب لکھنا۔۔۔۔

دیار شعر کو دریائے اردو۔۔

کہاں تک کر سکا سیراب لکھنا۔۔۔۔

بریدہ شاخ پر گلچیں کی نظریں۔۔

تڑپتی ہے رگ مضراب لکھنا۔۔۔۔۔

پڑا کیسے دریدہ پیرہن کو۔

۔حریر و اطلس و سنجاب لکھنا۔۔۔۔

یہ دل کا قلزم ہستی میں کیونکر۔۔

سفینہ ہوگیا غرقاب لکھنا۔۔۔۔

تجھے عرض تمنا سے غرض ہے۔۔

کہ خود کو ماہی بے آبلکھنا۔۔۔۔

 

حدیث شوق کو دلکش بنادے۔۔

ضروری کیا ہے پیچ و تاب لکھنا۔۔۔

بنام حرمت لفظ و معانی۔۔

کھلے قوسین میں اعراب لکھنا۔۔۔

عبارت کو نظر انداز کر کے۔۔

فقط قرطاس پر “بیتاب” لکھنا۔

۔۔ سنا کر اک غزل خط کے عوض  میں۔۔

یہ خط ہے نادر و نایاب لکھنا۔۔

جلیل اب کے جو خط ارسال کرنا۔۔

قلم کاغذ نہ استعمال کر نا۔۔۔۔

 

اپنا تبصرہ بھیجیں