Breaking News
Home / ادب / شعرو ادب / شاعری (page 5)

شاعری

poetry

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے

Read More »

عاقل میں خود کو سمجھا مگر سرپھرا ہوں میں

غزل ڈاکٹر جاوید جمیل  عاقل میں خود کو سمجھا مگر سرپھرا ہوں میں میں عمر بھر یہی نہیں سمجھا کہ کیا ہوں میں  دعویٰ میں کیسےکر دوں کوئی پارساہوں میں سچ  تویہ ہے، برا نہیں سب سے برا ہوں میں نکلا تھا برسوں پہلے کسی کی تلاش میں چسپاں یہ اشتہار ہیں اب گمشدہ ہوں میں حاکم یہ کہتا پھرتا ...

Read More »

ٹھو کریں کھا کے وہ خو د ہی سنبھل جا ئے گا

Farida Lakhani Sydney Astrailiaٹھو کریں کھا کے وہ خو د ہی سنبھل جا ئے گا را ستہ اس کا آگے نکل جا ئے گاکیا خبر تھی وہ اتنا بد ل جا ئے گا وقت کا وار اس پر بھی چل جا ئے گااِک خلش اس کو تڑ پا ئے گی عمر بھرو ہ سمجھتا ہے کا نٹا نکل جا ئے گاریت کی ...

Read More »

ہمارا دل سویرے کا سنہرا جام ہو جائے​ چراغوں کی طرح آنکھیں جلیں جب شام ہو جائے​ ​ میں خود بھی احتیاطا” اُس طرف سے کم گزرتا ہوں​ کوئی معصوم کیوں میرے لیئے بدنام ہو جائے​ ​ عجب حالات تھے یوں دل کا سودا ہو گیا آخر​ محبت کی حویلی جس طرح نیلام ہو جائے​ ​ مجھے معلوم ہے اُس ...

Read More »

یوم زن ۔۔ایک نظم

Read More »

کر یاد ذرا وہ وقت بہن جب زندہ گاڑی جاتی تھی

Selected by Sajda Perveen کر یاد ذرا وہ وقت بہن جب زندہ گاڑی جاتی تھی گھر کی دیواریں روتی تھیں جب دُنیا میں تو آتی تھی جب باپ کا’’جھوٹی غیرت‘‘ سے خوں جوش میں آنے لگتا تھا جس طرح جنا ہو سانپ کوئی یوں ماں تیری گھبراتی تھے عورت ہونا تھی سخت خطا، تھے اِس پر سارے ظلم روا یہ ...

Read More »

تیرے ابرووں‌کی حسیں‌کماں ، نظر آ رہی ہے فلک نشاں

selection of Tariq Ashraf  پیر حضرت سید نصیر الدین نصیر گدی نشین (پیر مہر علی شاہ) گولڑہ شریف    تیرے ابرووں‌کی حسیں‌کماں ، نظر آ رہی ہے فلک نشاں نہ کرشمہ قوسِ قزح سے کم ، نہ کشش ہلال کے خم سے کم   نہ ستا مجھے ، نہ رلا مجھے ، نہیں اور تابِ جفا مجھے کہ مری متاعِ ...

Read More »

جو شخص اصولوں سے مکرتا ہے بہت جلد

 selected by Tariq Ashraf جو شخص اصولوں سے مکرتا ہے بہت جلد توقیر کی مسند سے اترتا ہے بہت جلد   دیکھا ہے یہی ہم نے کہ دولت کا پجاری دولت کی ہوس کرکے ہی مرتا ہے بہت جلد   طوفان کے آثار نظر آئیں تو تیراک ملاح کا دم آپ ہی بھرتا ہے بہت جلد   اللہ کی نصرت ...

Read More »

بیٹوں کے سر سے باپ کا سایہ جو ہٹ گیا

 پرویز پری پیکر selected by  Tariq Ashraf بیٹوں کے سر سے باپ کا سایہ جو ہٹ گیا اتنا بڑا مکان تھا حصّوں میں بٹ گیا   کہتے ہیں نقشِ پا کہ رُکا تھا وہ دیر تک دستک دیے بغیر جو در سے پلٹ گیا   میں خود ڈرا ہوا تھا پہ ہمّت سی آ گئی جب بچّہ ڈر کے میرے ...

Read More »

کم سے کم لفظوں میں جس نے بات ہمیں سمجھائی ہے

غزل کم سے کم لفظوں میں جس نے بات ہمیں سمجھائی ہے  غور کیا تو پایا ان میں ساگر سی گہرائی ہے   بادل گرجیں بجلی چمکے طوفاں ہو یا تیز ہوا آگے بڑ ھنے والوں نے ہی اپنی منزل پائی ہے   ہر گل کیوں ہے دست وگریباں اپنوں سے ہی آپس میں گلشن کی بدنامی ہے یہ مالی ...

Read More »
Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.