Home / حالات حاضرہ / خبریں / نئے صوبے بنانے سے کیا سنگین خطرات لاحق ہوسکتے ہیں؟ہمایوں اختر خان نے واضح کردیا

نئے صوبے بنانے سے کیا سنگین خطرات لاحق ہوسکتے ہیں؟ہمایوں اختر خان نے واضح کردیا

نئے صوبے بنانے سے کیا سنگین خطرات لاحق ہوسکتے ہیں؟ہمایوں اختر خان نے واضح کردیا

تحریک انصاف کے رہنما ہمایوں اختر خان نے کہاہے کہ نئے صوبے بناناملک کے لئے انتہائی خطرناک ہوسکتاہے ، نئے صوبوں کی بجائے ضلعی حکومت کوطاقت دینی چاہئے ۔

نیوزچینل 24کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ہمایو ں اختر خان نے کہاکہ نئے صوبے بناناملک کے لئے انتہائی خطرناک ہوسکتاہے ، نئے صوبوں کی بجائے ضلعی حکومت کوطاقت دینی چاہئے ۔انہوں نے کہا کہ میرے والد نے پلاٹ بیچ کر ہمیں پڑھایا ، میرے اوپر نیب نے تین سال تحقیقات کیں لیکن ایک کیس بھی نہیں بنا سکا ۔

ان کا کہناتھا کہ افغانستان میں امن پاکستان کے مفاد میں ہے ، بیورو کریسی کو موثر ہونا چاہئے ، حکومت کو براہ راست کسان کو سبسڈی دینی چاہئے ، سی پیک پاکستان کیلئے ایک بہت بڑا گیم چینجر ہے ، اس وقت ملک کی جغرافیائی پوزیشن بہت اچھی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ 18ترمیم پر بحث ہونی چاہئے ، قومی اسمبلی کی مدت کم کرکے چار سال کردی جائے ۔

 

Check Also

فیس بک اور واٹس ایپ کی اندرونی لڑائی پہلی بار منظر عام پر آگئی

فیس بک نے 2012ءمیں انسٹاگرام اور 2014ءمیں واٹس ایپ بالترتیب 1ارب ڈالر اور 19ارب ڈالر ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.
%d bloggers like this: