Breaking News
Home / ادب / شعرو ادب / شاعری / کسی سے کوئی شکا یت نہ کچھ گلہ رکھئے

کسی سے کوئی شکا یت نہ کچھ گلہ رکھئے

غزل : فریدہ لا کھا نی ۔فرحٓ

( سڈنی ۔آ سٹریلیا )
( دو مطلو ں پر کہی ہو ئی ایک غزل )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کسی سے کوئی شکا یت نہ کچھ گلہ رکھئے
دراز صرف محبت کا سلسلہ ر کھئے
خیا ل و خواب میں ہی اس سے را بطہ ر کھئے
خرد سے کچھ تو جنو ں کا معا ملہ ر کھئے
د لو ں کی بات دلو ں تک رہے تو بہتر ہے
ز بان کھو ل کے کیو ں ا پنا مد عا ر کھئے
بہت ہے وقت کی تنگی محبتو ں کے لئے
نہ بھو ل کر بھی کسی دوست کو خفا رکھئے
تمہا ری راہ پہ آ جا ئیگا کبھی نہ کنبھی
ا بھی تو با تو ں میں کچھ دن اسے لگا رکھئے
عطا ئے دوست ہے جا نے نہ د یجیئے اسکو
مطا ئع غم کو کسی طو ر سے بچا رکھئے
د لو ں کی با ت د لو ں تک پہنچ ہی جا ئے گی
چھپا کے شعر میں کچھ حرفِ آ شنا رکھئے
ا چھا ہے اس سے کچھ فا صلے بیھی ہو ں
قریب جا کے بھی کچھ اس سے فا صلہ رکھئے۔

Check Also

اک آس لگائے بیٹھا ہوں اک بار تو کعبہ دیکھوں میں

Related

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

%d bloggers like this: