Home / کالم / نااہلیت کی تلوار : کوئی بچے گا بھی؟

نااہلیت کی تلوار : کوئی بچے گا بھی؟

(شیخ خالد زاہد)

Sheikh-Khalid-Zahid-300x180

ماضی کے ایک وزیرِ داخلہ پاکستان کوحفاظتی حصار اور دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے کسی بھی اہم موقع یا دن پر رابطے کے ذرائعے بند کرنے کی ریت ڈالی جو ابھی تک چل رہی ہے اورکسی بھی اہم دن موبائل سروس بندکر دی جاتی ہے ۔ نئے (جوکہ پرانے ہوچکے)وزیر داخلہ صاحب نے پاکستان میں شفاف تحقیقات کے حوالے سے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا تحفہ دیا ہے ۔ ہر کیس کیلئے مختلف اداروں سے افراد چن کر ٹیمیں تشکیل دی جاتی ہیں۔ خصوصی طور پر اس کا آغاز کراچی میں جاری آپریشن کو منتقی شکل دے کر اپنے انجام کی جانب لے جانا تھا ۔ ان ٹیموں نے کام کیا رپورٹیں بھی جمع کروائیں اور ان رپورٹوں کی بدولت ملزم اپنے کئے کے ثابت ہونے پر مجرم قرار پائے اور تختہ دار پر بھی لٹکائے گئے۔ ایک ٹیم پانامہ کیس کی چھان پھٹک کیلئے بھی بنائی گئی جس پر تقریباً ساری سیاسی جماعتوں کی قیادت نے کسی قسم کا کوئی اختلاف نہیں ظاہر کیا اور ساری سیاسی جماعتیں اس تحقیقاتی ٹیم کی تحقیقات پر مطمعین نظر آئیں سوائے تحقیقات کی زد میں آئی ہوئی میاں صاحب کی مسلم لیگ کے۔ یہ تحقیقاتی ٹیم ۲۰ اپریل کے پہلے فیصلے کی صورت میں تشکیل پائی ، پہلے فیصلے کی سماعت جو تین جج کر رہے تھے ان میں سے دو جج صاحبان نے اسی دن اور اس وقت تک کی جراح کی بنیاد پر میاں صاحب کو نااہل قرار دے دیا تھا مگر حفظان ماتقدم یہ ٹیم تشکیل دلوائی اور بھرپور چھان پھٹک کرنے کے بعد باقاعدہ طور پر میاں صاحب کو نااہل قرار دیا گیا۔
جو کام ۲۰ اپریل کو نا ہوسکا وہ ۲۱ جولائی کو ہو گیا اور سن ۲۰۱۷ ہی رہا (ہم نے اپنے مضمون بعنوان ۲۰ اپریل آکر رہیگی میں لکھ دیا تھا)۔ پاکستان کی تاریخ میں ایک ایسا فیصلہ جس نے نا جمہوریت کو گرنے دیا اور نا ہی بوٹوں کی آواز نے عوام اور سیاستدانوں کو خوفزدہ کیا اورانکے دلوں کو دہلایا، بلکہ پاکستان کی عدلیہ بھر پور کھوج سے دستیاب ہونے والے شواہد کی روشنی میں بغیر کسی سیاسی و عسکری دباؤ کے موجودہ وزیر اعظم کو سیاسی نااہل قرار دیدیا۔ چندغور طلب باتوں میں میاں نواز شریف صاحب اور انکے اہل خانہ پر کوئی سیاسی کیس نہیں تھا(کیونکہ وہ اقتدار میں تھے سیاسی کیس بننے کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا) بلکہ ملک سے لوٹی گئی یاغیر واضح طریقے سے کمائی گئی رقم باہر منتقل کرنے کا الزام تھا جس کی باقاعدہ تحقیقات ہوئی اور تحقیقات کی روشنی میں پاکستان کی اعلی ترین عدلیہ کے پانچ رکنی بینچ کے پانچوں معزز جج صاحبان نے میاں صاحب کو نااہل قرار دے دیا۔ ایک طرف میاں صاحب اس بات پربضد ہیں کہ ان کو بتایا جائے کہ ان کا قصور کیا ہے۔ وہ یہ تو بارہا پوچھ چکے ہیں کہ مجھے میرا قصور بتایا جائے مگر انہوں نے ایک بار بھی یہ نہیں کہا کہ میرے بچوں کا کیا قصور ہے انہیں کیوں اس معاملے میں گھسیٹا گیا ۔ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے بارہا میاں صاحب کے بچوں اور دیگرتعلق داروں کو بھی بلایا کہ وہ یہ بات واضح کردیں کے آمدنی کے ذرائع کیا تھے اور جو پیسہ ملک سے باہر گیا وہ کیسے گیا، مگر یہ بات ثابت کرنے کیلئے پیش کی جانے والی دستاویزات ناکافی ثابت ہوئیں۔ جو لوگ تفصیلی فیصلے کی ورق گردانی کر چکے ہیں وہ یہ بتاسکتے ہیں کہ فیصلے میں غلط تو بہت واضح ثابت ہوگیا اور دنیا نے دیکھ لیا مگر کوئی پیش کی جانے والی دستاویزات ٹھیک بھی تھیں یا نہیں۔
ہمارے ملک میں کسی بھی معاملے ، حادثے یا کسی بھی غیر یقینی صورتحال سے نمٹنے کیلئے اسی وقت اقدامات کئے جاتے ہیں جسے ہنگامی اقدامات کہا جاتا ہے ۔ کسی بھی قسم کی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے کوئی باقاعدہ حکمتِ عملی تیار نہیں کی جاتی ۔ پانامہ لیکس کے بعد سے پاکستان کے سیاسی ماحول میں ایک ایسی گرما گرمی تھی جو تھمنے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی اس گرماگرمی کی وجہ سے ہی ملک میں گرم موسم بھی بہت طویل اور شدید ہوگیا۔ میاں صاحب آخری دم تک یہی سوال کرتے رہے کہ مجھے نااہل کرنے کی وجہ تو بتا دو بہر حال آج پاکستان کے نئے عبوری وزیرِ اعظم حلف اٹھائنگے جسکے لئے قوی امکان ہے کہ محترم شاہد خاقان عباسی صاحب ایوان میں واضح اکثریت ہونے کی بنا ء پر اس عہدے کو رونق بخشینگے۔ دوسری جانب اس خیال کو رد نہیں کیا جاسکتا کہ نواز لیگ میں اگر کوئی منفی گروپ بن گیا ہے اور وہ نواز لیگ کے ساتھ آگے چلنے کو تیار نہیں تو پھر شائد ہما کسی اور کے سر پر بیٹھ جائے جس کے امکان بہت کم ہیں مگر ہیں۔
آخر یہ احتساب ایسی کون سی بلا ہے جس سے سب ہی بوکھلائے ہوئے اور خوفزدہ دیکھائی دیتے ہیں ۔ احتساب کرنے والے بھی ہماری طرح کے انسان ہیں اور سب سے بڑھ کر پاکستانی بھی ہیں تو پھر بوکھلاہٹ اور خوف کس بات کی ہے ۔ اگر واقعی انصاف چاہتے ہیں تو پھر اپنے آپ کو احتساب کیلئے پیش کردیں۔ہمیں کوئی احتساب کا پیمانہ بنانا پڑے گااور اسکے لئیے ایک دستاویز مرتب کرنی پڑے گی۔جیسی ایک دستاویز ۲۰۰۷ میں قومی مفاہمتی فرمان (NRO) بنایا گیا یا لگایا گیاجس کے تحت سارے کہ سارے کرپٹ اور بے ایمان لوگ ایسے ہوگئے جیسے کبھی کسی ایسے گناہ کے مرتکب ہی نا ہوئے ہوں۔ کیا اس قومی مفاہمتی فرمان کا نام بدل کر ۲۰۱۷ میں پاکستان تحریک انصاف تو نہیں رکھ دیا گیاہے۔ اگر ایسا نہیں ہے تو پھر پاکستان میں تو سیاست کرنے والا کوئی نہیں ملے گا یہاں تو انتخابات میں پارٹی ٹکٹ ہی اسے ملتا ہے جو اپنی سیاسی جماعت کیلئے یا پھر جماعت کی قیادت کیلئے کسی نا کسی قسم کی کوئی قربانی دینے کیلئے تیار ہو۔
ہم مسلمانوں کو تو ایک دن ایک ایسے احتسا ب کے عمل سے گزرنا ہے جہاں پاکستانی ، سعودی یا قطری نہیں ہونگے بس مسلمان ہونگے وہاں احتساب کرنے والوں کو ہمارے کاغذات کی ضرورت نہیں ہوگی انہیں ہمارے بینک کے گوشوارے نہیں چاہئے ہونگے اور نا ہی گھروں کے کاغذات اور وہاں تو بچوں کے بارے میں بھی کوئی بات بتانے کی ضرورت نہیں پڑے گی ، اس دن تو ہماری زبانیں گنگ ہونگی کیونکہ ہمیں وہ سب کچھ ہمارا خالق و مالک ہمارا حقیقی محتسب سزا و جزا سنا رہا ہوگا کسی کو اپیل کرنے کی بھی جرات نہیں ہوگی اس وقت تو اگر کچھ ہوسکے گا تو انسان صرف ایک ہی صدا لگائے گا کے ہائے خسارا ہائے خسارا۔
بغیر کسی سیاسی جماعت کی سوچ سے حمایت یا اختلاف کرتے ہوئے گزشتہ چار سالوں کا جائزہ لیجئے ، پاکستان مسلسل سیاسی عدم استحکام کا شکار رہا جبکہ دوسری طرف دہشت گردی سے بری طرح اثر انداز ہوئے ہیں، عوامی مسائل اپنی جگہ جوں کے توں ہی رہے ۔ ایک انتخابات پر کتنا خرچہ آتا ہے اس بات کا اندازہ لگانا بھی عام آدمی کے بس کی بات نہیں۔ ۔ اپنے اس مضمون کے توسط سے پاکستان کی اعلی عدلیہ اور وہ پالیسی ساز اداروں سے درخواست کرنا چاہونگا کے نااہلی کی کوئی شرط الیکشن کمیشن کی ان شرائظ میں شامل کروائیں جس کی بنیاد پر کسی کاغذات جمع کروانے والے امیدوار کو انتخابات میں حصہ لینے کی اجازت دی جاتی ہے۔
اگر اسی طرح لوگ انتخابات میں کامیابی حاصل کر کے آتے رہے اور پھر ان پر الزامات کی بنیاد پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیمیں تشکیل پاتی رہیں اور تین سے چھ ماہ تک یہ ٹیمیں تحقیقات کر کے نااہل قرار دیتی رہیں تو ہمارے ملک کی خصوصیات میں ایک اور اضافہ ہوجائے گا کہ جہاں انتخابی عمل سے گزر کر نااہل قرار پاتے ہیں۔ یہ انتخاب کے عمل میں بہت بڑی خلیج ہے جس پر کام کرنے کی اشد ضرورت ہے اوراتنی ضرورت شائد اس سے قبل کبھی بھی نہیں رہی ہوگی۔ پاکستان کی سلامتی اور بقاء کیلئے شفاف احتساب کی ابتداء بہت ضروری تھی اور وہ یقیناًہو چکی ہے اب اس عمل کو آگے لے کر جانا ہے۔ بلکل اسی طرح جیسے دہشت گردی کے خلاف سارا پاکستان ایک ساتھ کھڑا ہے اسی طرح معاشی دہشت گردی کے خلاف بھی، کرپشن کیخلاف بھی بغیر کسی سیاسی نعرے بازی اور سیاسی مفاد کے ایک ساتھ کھڑے ہونا پڑے گا۔ جس کسی پر بھی انگلی اٹھتی ہے اسے اپنے آپ کو احتساب کیلئے مشترکہ تحقیقاتی کمیٹی کے سامنے پیش ہونے میں کوئی ترددکرنے کی ضرورت نہیں۔ آنے والا وقت بتائے گا کہ کون ۶۲ اور ۶۳ پر پورا اترتا ہے اور کس کو نااہلیت کی تلوارذبح کرتی ہے بلکہ قتل کرتی ہے۔

Check Also

سیاسی فرقہ واریت

عارف محمود کسانہ اکثر یہ کہا جاتا ہے اسلام نے فرقہ واریت سے سختی سے ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *



Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.
%d bloggers like this: