Breaking News
Home / حالات حاضرہ / خبریں / انسانی صلاحیتوں میں اضافہ سے سائنسدان فکرمند

انسانی صلاحیتوں میں اضافہ سے سائنسدان فکرمند

 
سائنسدانوں کا کہنا ہے انسانی صلاحیتوں میں اضافے کے لیے جس شدت سے رسرچ کی جا رہی ہے اس سے یہ ممکن ہے کہ انسانوں کی ایسی نسل پیدا ہو جو اپنی زندگی کی ہر بات کو یاد رکھ سکے اور کبھی تھکے ہی نہیں۔واضح رہے کہ آج کے دور میں پہلے ہی ایسے بہت سارے لوگ ہیں جو دماغی صلاحیت میں اضافے اور رات رات بھرجاگنے کے لیے ایسی ادویات کا استمعال کر رہے ہیں جو صرف یادداشت کھونے کی بیماری کے علاج کے لیے استمعال ہوتی ہیں۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ صرف آئندہ پندرہ برسوں میں اس طرح کے آلات موجود ہونگیں جو انسان کی زندگی میں ہونے والی روز مرہ کی تمام باتوں کو ایک ویڈیو ریکارڈنگ کی طرح ریکارڈ کرسکے گا اور لوگ اس ریکارڈنگ کا استمعال تب تب کرسکتے ہیں جب جب ان کی یادداشت ان کا ساتھ نہ دے۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ یہ بھی ممکن ہے کہ انسانوں کی ایسی نسل پیدا ہو جو اندھیرے میں بھی دیکھ سکے۔سائنسدانوں کا کہنا ہےکہ انسانی صلاحیتوں میں اس قدر اضافہ ایک خوشی کی بات ہے لیکن اس کی ایک قیمت بھی چکانی پڑے گی جو کہ صرف معاشی نہ ہوکر اخلاقی بھی ہوگی۔برطانیہ کی اکاڈمی آف میڈیکل سائنس، دی برٹش اکاڈمی، دی رائل اکاڈمی آف انجئیرنگ اور رائل سوسائٹی کے سانئسدانوں کا کہنا ہے کہ انسانی صلاحیتوں کے اضافے کے بارے میں ہونے والی رسرچ کے نقصانات کے بارے میں فوری طور پر بحث کی ضرورت ہے۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ انسانی صلاحیتوں میں اضافہ عمر دراز لوگوں کے لیے مدد گار ثابت ہوسکتا ہے تاکہ وہ نوجوان لوگوں کے ساتھ کام کرنے میں مقابلے کی صلاحیت رکھ سکیں۔ایک سائنسدان پروفیسر جنویرا رچرڈسن کا کہنا تھا ’ایسی مختلف تکنیک عمل میں لائی جا رہی ہیں جس سے انسانی صلاحیتوں میں اضافہ ہوسکے اور بعض جگہ ان کا استمعال بھی ہو رہا ہے اور وہ ہمارے کام کرنے کے طریقے میں اچھی اور بری تبدیلیاں لارہی ہیں‘۔واضح رہے کہ متعدد جائزوں سے یہ معلوم ہوا ہے کہ بہت سے طلباء اس طرح کی ادویات کا استمعال کر رہے ہیں جس سے امتحان میں ان کی کارکردگی بہتر ہو رہی ہے۔بعض لوگ یہ دوائیں انٹرنٹ کے ذریعے خریدتے ہیں جس سے یہ خطر پیدا ہوتا ہے کہ یہ دوائیں کھانا محفوظ بھی ہے یا نہیں۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ان ادویات کے دوراندیش اثرات کے بارے میں معلومات کم ہے اور یہ بھی نہیں معلوم کہ آگے چل کر یہ دوائیں نوجوان افراد کے دماغ پر کیا اثر ڈالتی ہیں۔میڈیکل رسرچ کاؤنسل کے ڈاکٹر رابن لول بیج کا کہنا ہے ’انسانی صلاحیت میں اضافے والی دوائیں پالسی بنانے والوں کے سامنے بڑے چیلنج پیدا کرتی ہیں‘۔ان کا مزید کہنا تھا ’یہ دوائیں کھانے میں آسان ہوتی ہیں، بغیر ڈاکٹر کی صلاح کے بازار میں آسانی سے دستیاب بھی ہیں اور بہت سے صحت مند افراد ان ادویات کا استمعال بھی کر رہے ہیں‘۔ان کا کہنا ہے کہ ان ادویات کا استمعال صحیح ہے لیکن اس کے کیا نتائج ہونگیں اس کے بارے میں بحث اور غور و فکر بھی بے حد ضروری ہے۔

Check Also

پاکستان میں ٹک ٹاک پر پابندی کی 5 ممکنہ وجوہات سامنے آگئیں

 شارٹ ویڈیو شیئرنگ ایپ ’ٹک ٹاک‘ پر پابندی عائد کیے جانے کی 5 اہم وجوہات ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *



Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.
%d bloggers like this: