Breaking News
Home / ادب / شعرو ادب / شاعری / آج کا انسان بھی کتنا بڑا نادان ہے

آج کا انسان بھی کتنا بڑا نادان ہے

غزل

ایلیزبتھ کیورین موناؔ

آج کا انسان بھی کتنا بڑا نادان ہے

اپنی بربادی کا خود کرتا سدا سامان ہے

 

بے خبر ہے مختصر سی عمر کے مقصد سے یہ

اس کو لمبی عمر پانے کا مگر ارمان ہے

 

جا بجا میلے لگے ہیں یوں تو رنگ و نور کے

تیرے بن ائے دوست ہر محفل میری  سنسان ہے

 

کوئی ہندو ہو کہ مسلم،سکھ ہو یا عیسائی ہو

اب تو بس  پیسہ ہی سب کا دین  اور ایمان ہے

 

کاش آجاتا ہمیں غیروں  کے آنسو پوچھنا

دوسروں کو رنج دینا تو بہت آسان ہے

 

پھول گلشن میں کھلائے جا جگر کے خون سے

کوئی دیکھے یا نہ دیکھے دل ترا  ویران ہے

 

یہ روایت چل پڑی ہے دور خود غرضی میں آج

ان کو ہی ٹھکرادو جن کا آپ پر احسان ہے

 

شدت غم میں بھی مونا ؔمسکرائے جا  یونہی

اب تو تیری مسکراہٹ ہی تری پہچان ہے

Elizabeth Kurian ‘Mona’

Hyderabad, India
Reach: +91 9849183498

Check Also

بہت مصروف رہتے تھے

بہت مصروف رہتے تھے ہواؤں پر حکومت تھی تکبر تھا کہ طاقت تھی بلا کی ...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *



Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

Copy Protected by Chetan's WP-Copyprotect.
%d bloggers like this: