Breaking News
Home / ادب / شعرو ادب / شاعری / دائم ہو اس کے حسن کی نزاکت

دائم ہو اس کے حسن کی نزاکت


غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل

دائم ہو اس کے حسن کی نزاکت، خدا کرے
اورمجھ میں یہ جنون کی لذت، خدا کرے

سنجیدگی کا رنگ ہو تھوڑا سا پیار میں
باقی مگر ہو رنگ_ شرارت، خدا کرے

مدت سے کوئی تیر,نہ خنجر, نہ سنگ وخشت
دشمن ہومیرا زندہ سلامت، خدا کرے

غمگین ہوں، لطیفے ہیں پھر بھی زبان پر
قائم رہے یہ ذوق_ ظرافت، خدا کرے

پوشیدہ ہیں گناہوں میں بربادیوں کے راز
نازل ہو دل پہ حرف_ ندامت، خدا کرے

مجمع کی کیفیات کا منظرعجیب تھا
بڑھتا رہے یہ زور_ خطابت، خدا کرے

کہتے ہیں اپنی، اوروں کی سنتے نہیں ہیں لوگ
ہوجائے کاش شوق_ سماعت، خدا کرے

کہتے ہیں اہل_ دین کہ تقوی ہی دین ہے
وہ جان جائیں کاش اقامت، خدا کرے

میری دعا یہی ہے شریک_ سفر کے ساتھ
آ جائے ہم کو حسن_ نظامت، خدا کرے

تخلیق ہے بلندی افکارکی عطا
آ ئے ترے کلام میں رفعت، خدا کرے

ہر شخص کاش سیکھ لے آداب پیار کے
دل میں نہ ہو کسی کے کدورت، خدا کرے

جاوید چھین سکتا ہے کیا کوئی اسکا رزق
جس شخص کی ہمیشہ کفالت خدا کرے

Check Also

عشق میں نے لکھ ڈالا "قومیت” کے خانے میں

عشق میں نے لکھ ڈالا "قومیت” کے خانے میں اور تیرا دل لکھا "شہریت” کے ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)

%d bloggers like this: